Question & Answer

  • عدت کا نان ونفقہ شوہر کے ذمہ ہے

    الاستفتاء

    کیا فرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ کے بارے میں کہ

    میں مغفور احمد عرف شہزاد ولد مسرور احمد 12 فروری 2009ء کو اپنی بیوی کو طلاق دے چکا ہوں۔ معلوم یہ کرنا چاہتا ہوں کہ مطلقہ کی عدت کتنی ہے اور عدت کے دن وہ میرے والد کے جس مکان میں رہائش پذیر تھی اُسی میں گزارے یا الگ کرائے کا مکان بھی لے کر دیا جا سکتا ہے۔ نیز نان و نفقہ کس کے ذمہ ہو گا۔ شریعت مطہرہ کی روشنی میں ان تمام باتوں کا جواب تحریر فرما کر مشکور فرمائیں۔

    السائل

    مغفور احمد عرف شہزاد

    نزد جنات بلڈنگ پرانا سکھر

    الجواب بعون الملک الوھاب

    صورتِ مسؤلہ میں طلاق ہو گئی ہے۔ سائل نے بتایا کہ اس نے تین طلاقیں دی ہیں لہٰذا بیوی حرام ہو چکی ہے۔ رہا عدت کا مسئلہ تو سائل نے بتایا کہ والد کے جس مکان میں مطلقہ رہ رہی ہیں وہ ایک منزل ہے جو دراصل سائل کی رہائش گاہ ہے۔ عورت اسی منزل میں عدت گزارے گی اور اس کی عدت کا نان و نفقہ بھی آپ کے ذمہ ہے۔ عدت گزارنے کے بعد آپ اس کی رہائش اور نان و نفقہ کے پابند نہیں رہیں گے بلکہ عدت کے بعد انہیں آپ کے مکان سے جانا ہو گا۔

    واللہ تعالیٰ اعلم بالصواب

    مفتی محمد ابراہیم القادری الرضوی غفرلہ

    خادم جامعہ غوثیہ رضویہ سکھر 14 مارچ 2009ء

Ask a Question

Tanzeem Publications

  • رب پہ بھروسہ از مولانا فاروق احمد سومرو
  • شب وروز کی پکار از مولانا کریم داد قادری
  • برائیوں کی جڑ از مولانا احمد رضا
  • استقبل ربيع الأول
  • ظلم کی برائی از مولانا مشتاق احمد شمس القادری
  • اخلاص از مولان گلشیر احمد قادری
  • رضا بالقضاء از مولانا دانیال رضا
  • نیکی کی بہاریں از ابو اریب محمد چمن زمان نجم القادری
  • مہمان نوازی از علامہ عبد المصطفی شیخ زادہ
  • جمالِ شریعت سندھی ترجمہ بہارِ شریعت پہلا حصہ از مفتی جمیل احمد چنہ
  • شکرِ پروردگار از تنظیم الارشاد زیرِ طبع
  • فضائل رمضان از علامہ محمد صادق سومرو
  • عمامہ کے ماثور رنگ از ابو اریب محمد چمن زمان نجم القادری
  • الاصباح شرح صغری اوسط کبری از مفتی محمد شہزاد حافظ آبادی
  • ستائیس رجب کی عبادتیں ، عبادت یاگمراہی؟ از ابو اریب محمد چمن زمان نجم القادری