Question & Answer

  • محراب میں شیشہ لگانا

    الاستفتاء 

    کیا فرماتے علماء کرام اس مسئلہ میں کہ

    ہمارے محلے کی مسجد کے صحن میں سیمنٹ کی جالیاں لگائی گئی ہیں جن میں کبوتر کا مجسمہ بنا ہواہے کیا یہ جائز؟ اس سے نماز میں فرق تو نہیں آتا؟اور محراب مین شیشہ کا کام کیا گیا ہے شیشہ دو انچ سے ساڑھے بارہ انچ تک سائیڈ کی دیوار میں نصب ہے اس کی بھی وضاحت کریں؟

    السائل

    ملک محمدبشیر

    الجواب بعون الملک الوھاب

    محراب میں شیشہ لگنے سے نماز میں کچھ فرق نہیں پڑتا البتہ جالیوں میں جو کبوتر کے مجسمے ہیں اگر وہ نمازی کے چہرے کے سامنے پڑیں تو ایسے نمازیوں کی نماز مکروہ تحریمی واجب الاعادہ ہوگی۔

    واللہ تعالی اعلم بالصواب

    مفتی محمد ابراہیم القادری الرضوی غفر لہ

    جامعہ غوثیہ رضویہ سکھر ١٤ ربیع الاول ١٤٠٨ھ مطابق٨٧/١١/٧

Ask a Question

Tanzeem Publications

  • رب پہ بھروسہ از مولانا فاروق احمد سومرو
  • شب وروز کی پکار از مولانا کریم داد قادری
  • برائیوں کی جڑ از مولانا احمد رضا
  • ظلم کی برائی از مولانا مشتاق احمد شمس القادری
  • اخلاص از مولان گلشیر احمد قادری
  • رضا بالقضاء از مولانا دانیال رضا
  • نیکی کی بہاریں از ابو اریب محمد چمن زمان نجم القادری
  • مہمان نوازی از علامہ عبد المصطفی شیخ زادہ
  • جمالِ شریعت سندھی ترجمہ بہارِ شریعت پہلا حصہ از مفتی جمیل احمد چنہ
  • شکرِ پروردگار از تنظیم الارشاد زیرِ طبع
  • فضائل رمضان از علامہ محمد صادق سومرو
  • عمامہ کے ماثور رنگ از ابو اریب محمد چمن زمان نجم القادری
  • الاصباح شرح صغری اوسط کبری از مفتی محمد شہزاد حافظ آبادی
  • ستائیس رجب کی عبادتیں ، عبادت یاگمراہی؟ از ابو اریب محمد چمن زمان نجم القادری