Question & Answer

  • دیہات میں جمعہ کی ادائیگی

    الاستفتاء

    کیافرماتے ہیں علماء دین اس سئلہ کے بارے میں کہ

    ایک گاؤں میں ایک گاؤں میں جمعہ کی نمازتقریبا چالیس سال سے ہو رہی ہے اور نماز جمعہ میں تقریبا ڈیڑھ سو آدمی شریک ہو تے ہیں۔اب کچھ لوگ اعتراض کرتے ہیں کہ جمعہ کی نماز بند کی جائے کیونکہ دیہات میں جمعہ  کی نماز نہیں ہوتی۔

    السائل

    ملک محمد تنویر عدنان

    سنی پور ابوظہبی کالونی نمبر۲ رحیم یار خان 

    الجواب بعون الملک الوھاب

    جہاں قدیم سے جمعہ رائج ہو اور وہ جگہ دیہات گاؤں ہو تو عوام کو روکا نہ جائے خصوصاجہاں فتنہ ہو لہذا صورت مسؤلہ میں جمعہ سے عوام کو نہ روکا جائے کہ عوام اسے منع عن ذکر اللہ اور نہی عن الصلاۃ پر محمول کریں گے اور کتب فقہ میں اس کی نظیریں موجود ہیں کہ ایسی صورت میں عوام سے نہ الجھا جائے البتہ انہیں یہ بتا دیان چاہئے کہ اس دن کی ظہر ان پر فرض ہے۔ کصلوۃ المصلی الجاہل فی المصلی بعد صلوۃ العید وقضاء العامی فجر یومہ علی نور الطلوع کما ھو مسطور فی الدر المختار وغیرہ ۔

    واللہ تعالی اعلم بالصواب

    مفتی محمد ابراھیم القادری الرضوی غفرلہ

    خادم دارالافتاء جامعہ غوثیہ رضویہ سکھر ٥ ذوالحج١٤٠٥ھ مطابق٨٥/٨/٢٥

Ask a Question

Tanzeem Publications

  • رب پہ بھروسہ از مولانا فاروق احمد سومرو
  • شب وروز کی پکار از مولانا کریم داد قادری
  • برائیوں کی جڑ از مولانا احمد رضا
  • ظلم کی برائی از مولانا مشتاق احمد شمس القادری
  • اخلاص از مولان گلشیر احمد قادری
  • رضا بالقضاء از مولانا دانیال رضا
  • نیکی کی بہاریں از ابو اریب محمد چمن زمان نجم القادری
  • مہمان نوازی از علامہ عبد المصطفی شیخ زادہ
  • جمالِ شریعت سندھی ترجمہ بہارِ شریعت پہلا حصہ از مفتی جمیل احمد چنہ
  • شکرِ پروردگار از تنظیم الارشاد زیرِ طبع
  • فضائل رمضان از علامہ محمد صادق سومرو
  • عمامہ کے ماثور رنگ از ابو اریب محمد چمن زمان نجم القادری
  • الاصباح شرح صغری اوسط کبری از مفتی محمد شہزاد حافظ آبادی
  • ستائیس رجب کی عبادتیں ، عبادت یاگمراہی؟ از ابو اریب محمد چمن زمان نجم القادری