Question & Answer

  • ولیمہ

               بحضور فیض گنجور جناب قبلہ مفتی صاحب
        عرض خدمت ہے کہ میں اپنے یتیم بھتیجے اور بھتیجی کی شادی کررہا ہوں اور جن سے کررہاہوں وہ بھی یتیم ہیں،دریافت طلب امر یہ ہے کہ ولیمہ کی شرعی حیثیت کیا ہے ۔۔۔۔۔۔؟؟؟ کیا ہم دونوں پارٹیاں ملکر ایک ہی بارات اور ایک ہی ولیمہ کرنا چاہیں تو کرسکتے ہیں یا نہیں۔۔۔۔۔۔؟؟؟
                        السائل : ایم حنیف ولدمرحوم عبدالرشید سکھر

    بسم اللہ الرحمن الرحیم
    الجواب

        دعوت ِ ولیمہ سنن مستحبہ سے ہے جو کہ سید عالم ؐ کے اقوال وافعال سے مبرھن ہے:
         جیسا کہ صحیح البخاری میں سید عالم ؐ کا فرمان گرامی مسطور ہے: أولم ولو بشاۃ۔۔۔۔۔۔)اللہ کے رسول ؐ نے عبدالرحمن بن عوف رضی اللہ تعالٰی عنہ سے ( فرمایا:ولیمہ کرو اگرچہ ایک بکری سے ۔
    (صحیح البخاری،کتاب النکاح، باب کیف یدعی للمتزوج،٧:٢١، الحدیث:٥١٥٥مطبوعہ:دار طوق النجاۃ)
        صحیح البخاری میں ہے :۔۔۔۔۔۔عن أنس، قال: ما أولم النبی صلی اللہ علیہ وسلم علی شیء من نسائہ ما أولم علی زینب، أولم بشاۃ
        جناب انس رضی اللہ تعالٰی عنہ سے مروی ہے کہ رسول اﷲ ؐ نے جتنا حضرت زینب رضی اللہ تعالٰی عنہا کے نکاح پر ولیمہ کیا، ایسا ولیمہ ازواجِ مطہرات میں سے کسی کا نہیں کیا۔ ایک بکری سے ولیمہ کیا۔
    (کتاب النکاح،باب الولیمۃ ولوبشاۃ،٧:٢٤،رقم الحدیث٥١٦٨،مطبوعہ:دار طوق النجاۃ)
        جامع الترمذی میں ہے:۔۔۔۔۔۔عن أنس بن مالک، أن النبی صلی اللہ علیہ وسلم أولم علی صفیۃ بنت حیی بسویق وتمر.
        جناب انس بن مالک سے مروی ہے کہ نبی ؐ نے حضرت صفیہ بنت حیی رضی اللہ تعالٰی عنہا پر ستو اور کھجوروں سے ولیمہ کیا۔
        (سنن الترمذی،کتاب النکاح، باب ماجاء فی الولیمۃ، ٢،٣٩٣،الحدیث١٠٩٥،دار الغرب الاسلامی بیروت)
        ولیمہ سنن مستحہ سے ہے اور باعث اجر عظیم ہے بشرطیکہ مقصد سنت کی ادائیگی ہو،ولیمہ شبِ زفاف کے بعد دوست احباب عزیز و اقارب اور محلہ کے لوگوں کی حسب استطاعت ضیافت کرنے کا نام ہے نیز دعوت ولیمہ تین دنوں تک کی جاسکتی ہے ۔
        ردالمحتارمیں ہے : ۔۔۔۔۔۔ھی طعام العرس۔۔۔۔۔۔ ولیمہ شادی کی دعوت کا نام ہے۔
        (ردالمحتار ،کتاب الحظر والاباحۃ،٦:٣٤٧،مطبوعہ: دارالفکر بیروت)
         فتاوی ہندیہ میں ہے:۔۔۔۔۔۔وولیمۃ العرس سنۃ، وفیہا مثوبۃ عظیمۃ وہی إذا بنی الرجل بامرأتہ ینبغی أن یدعو الجیران والأقرباء والأصدقاء ویذبح لہم ویصنع لہم طعاما
        دعوت ولیمہ سنت ہے اور اسمیں اجر عظیم ہے اور دعوت ولیمہ یہ ہے کہ جب اپنی عورت سے زفاف کرے تو اس کے لیے مناسب ہے کہ اپنے پڑوسیوں ،عزیز واقارب اور دوست احباب کے لیے دعوت کرے اور انکے لیے جانور ذبح کرے اور کھانا تیار کرے ۔
        فتاوی ھندیہ میں ہے:۔۔۔۔۔۔ولا بأس بأن یدعو یومئذ من الغد وبعد الغد، ثم ینقطع العرس والولیمۃ،
        اسمیں کوئی حرج نہیں کہ اس روزدعوت کرے یا دوسرے یا تیسرے روز دعوت کرے پھر عرس ولیمہ منقطع ہوجاتا ہے۔
    (کتاب الکراھیۃ،الباب الثانی عشر فی الھدایا والضیافات،٥:٣٤٣،دارالفکر بیروت)
    نیز حالات کے پیش نظر آپ اپنے مذکور بھتیجے اور آپکی بھتیجی کے شوہر یا اسکے اولیاء ملکر ایک ہی ولیمہ کرنا چاہیں تو حرج نہیں ۔
                          
                                 تصحیح وتصدیق                               واللہ عزاسمہ، اعلم بالصواب    

                                                  مفتی اعظم شیخ الحدیث                             جمیل احمد چنہ ( غفرلہ)
                                               مفتی محمد ابراہیم القادری                                 المتخصص فی الفقہ     

                                                  رئیس دارالافتائ                                     فی الجامعۃ الـغوثیۃ الرضویۃ بسکھر

                                           فی الجامعۃ الـغوثیۃ الرضویۃ بسکھر                     ٢٥ذوالقعد ١٤٣٤ ، 2013/10/02

     

     

     

Ask a Question

Tanzeem Publications

  • رب پہ بھروسہ از مولانا فاروق احمد سومرو
  • شب وروز کی پکار از مولانا کریم داد قادری
  • برائیوں کی جڑ از مولانا احمد رضا
  • ظلم کی برائی از مولانا مشتاق احمد شمس القادری
  • اخلاص از مولان گلشیر احمد قادری
  • رضا بالقضاء از مولانا دانیال رضا
  • نیکی کی بہاریں از ابو اریب محمد چمن زمان نجم القادری
  • مہمان نوازی از علامہ عبد المصطفی شیخ زادہ
  • جمالِ شریعت سندھی ترجمہ بہارِ شریعت پہلا حصہ از مفتی جمیل احمد چنہ
  • شکرِ پروردگار از تنظیم الارشاد زیرِ طبع
  • فضائل رمضان از علامہ محمد صادق سومرو
  • عمامہ کے ماثور رنگ از ابو اریب محمد چمن زمان نجم القادری
  • الاصباح شرح صغری اوسط کبری از مفتی محمد شہزاد حافظ آبادی
  • ستائیس رجب کی عبادتیں ، عبادت یاگمراہی؟ از ابو اریب محمد چمن زمان نجم القادری