Question & Answer

  • طلاق

    بیوی کا شوہر کے تین طلاقیں دینے کا دعویٰ

                     کیا فرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ کے بارے میں کہ ایک عورت اپنے شوہر کے متعلق کہتی ہے کہ اس نے مجھے تین طلاقیں دے دی ہیں جبکہ شوہر یہ کہتا ہے کہ مجھے طلاق دینے کے لیے مجبور کیا گیا اور میں نشہ میں تھا اور میں نے یہ کہا کہ میں طلاق نہیں دوں گا۔واضح رہے زوجین میں سے کسی کے پاس کوئی شرعی گواہ نہیں۔۔۔؟؟؟

    صورت مسئولہ کا حکم شرعی بیان فرماکر عنداللہ ماجور ہوں۔۔!

           السائل : آصف علی چنہ

    بہ معرفت مولانا محمد یاسین جتوئی،

    03133434404                 

    بسم اللہ الرحمن الرحیم

    الجواب منہ الھدایۃ والرشاد

                   صورت مستفسرہ میں بشرطِ صحت سوال جیسا کہ شوہر طلاق نہ دینے  کا مقر ہے ، اگر واقعی اس نے طلاق نہیں دی اور اس پر حلف بھی اٹھا لیتا ہے تو مذکورہ عورت پر وقوعِ طلاق کا حکم نہیں دیا جائے گا۔

    البتہ اگر مذکورہ عورت کو بہ یقین معلوم ہے کہ اسکے شوہر نے اسے تین طلاقیں دے دی ہیں تو بایں صورت مذکورہ عورت کو دیانۃً مذکور شخص کے پاس بہ حیثیت بیوی رہنا ، اور اسے اپنے پر  قدرت دینا ناجائز وحرام ہے۔

    درِ مختار میں ہے :
        والقول لہ بیمینہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اورحلف کیساتھ شوہر کا قول معتبر ہے۔
    (در المختار،کتاب الطلاق ،باب الکنایات،٣:٣٩١،مطبوعہ : دار الفکر بیروت)

    شامی میں ہے:    
        والمرأۃ کالقاضی إذا سمعتہ أو أخبرہا عدل لا یحل لہ تمکینہ۔۔۔۔۔۔فإنہ حلف ولا بینۃ لہا فالإثم علیہ

        اور عورت قاضی کی مثل ہے جب اس نے اُسے'' یعنی طلاق کو '' سنا یا عادل نے اسے خبر دی تو اسکو قدرت دینا حلال نہیں۔۔۔۔۔۔اگر وہ حلف اٹھا لیتا ہے اور بیوی کے پاس کوئی گواہ نہیں تو گناہ شوہر پر ہے۔
    (رد المحتار ،کتاب الطلاق، باب صریح الطلاق ٣:٢٥١،مطبوعہ: دار الفکر بیروت)
        نیز واضح رہے شوہر کے تین طلاق دینے کیصورت میں زوجہ اپنے شوہر پر حرام ہوجاتی ہے بغیر حلالہ کے کسی صورت حلال نہیں ہوتی۔
    قرآن کریم سورۃ البقرہ آیۃ ۲۲۹،۲۳۰  میں ہے:

    الطلاق مرتان ۔۔۔۔۔۔۔ فإن طلقها فلا تحل له من بعد حتى تنكح زوجا

    حلالہ کا طریقہ یہ ہے کہ
                 بیوی مذکور شوہر کی عدت طلاق تین مینسس بشرطیکہ حاملہ نہ ہو ورنہ وضع حمل پوری کرنے کے بعد دوسرے مرد سے نکاح کرے پھر بعد جنسی تعلق قائم کرنے کے دوسرا شوہر اسے طلاق دے یا اگر فوت ہوجائے تو اسکی عدت وفات پوری کرنے کے بعد پہلے شوہر سے نئے مہر کے ساتھ نکاح کرسکتی ہے۔
        فتاوی ہندیہ میں ہے:
        ان کان الطلاق ثلاثا ۔۔۔۔۔۔لم تحل لہ حتی تنکح زوجا غیرہ نکاحا صحیحا ویدخل بھا ثم یطلقھا او یموت عنھا

        (فتاوی ہندیہ،کتاب الطلاق الباب السادس،فصل فیما تحل بہ المطلقۃ وما یتصل بہ٤٧٣:١، دارالفکر بیروت)۔

                                      تصحیح وتصدیق                                       واللہ تعالی اعلم بالصواب

                                    مفتی اعظم,قطب الارشاد                                  حررہ:  جمیل احمدچنہ                                

                                 مفتی محمد ابراہیم القادری                                            (عفی عنہ بمحمد ن المصطفی ﷺ  )

                                         رئیس دارالافتاء                                       الجامعۃ الغوثیۃ الرضویۃ بسکھر

                               فی الجامعۃ الغوثیۃ الرضویۃ بسکھر                        ۲۸ ذوالقعد ۱۴۳۵؁ ، بمطابق 24-9-2014

          

Ask a Question

Tanzeem Publications

  • رب پہ بھروسہ از مولانا فاروق احمد سومرو
  • شب وروز کی پکار از مولانا کریم داد قادری
  • برائیوں کی جڑ از مولانا احمد رضا
  • ظلم کی برائی از مولانا مشتاق احمد شمس القادری
  • اخلاص از مولان گلشیر احمد قادری
  • رضا بالقضاء از مولانا دانیال رضا
  • نیکی کی بہاریں از ابو اریب محمد چمن زمان نجم القادری
  • مہمان نوازی از علامہ عبد المصطفی شیخ زادہ
  • جمالِ شریعت سندھی ترجمہ بہارِ شریعت پہلا حصہ از مفتی جمیل احمد چنہ
  • شکرِ پروردگار از تنظیم الارشاد زیرِ طبع
  • فضائل رمضان از علامہ محمد صادق سومرو
  • عمامہ کے ماثور رنگ از ابو اریب محمد چمن زمان نجم القادری
  • الاصباح شرح صغری اوسط کبری از مفتی محمد شہزاد حافظ آبادی
  • ستائیس رجب کی عبادتیں ، عبادت یاگمراہی؟ از ابو اریب محمد چمن زمان نجم القادری