Question & Answer

  • مسجد میں نماز جنازہ اداکرنا

    الاستفتاء

     ہمارے محلہ میں نمازِ جنازہ کیلئے کوئی جگہ نہیں ہے دوسرے محلہ کی ایک ہاؤسنگ سوسائٹی کے خالی پلاٹ پر نمازِ جنازہ ادا کی جاتی ہے۔ کیا ہم مسجد کی محراب کے باہر جنازہ رکھ کر امام صاحب اور چند نمازی مسجد کے باہر ہوں اور بقیہ نمازی مسجد کے اندر اس طرح جنازہ کی نماز ادا کرسکتے ہیں ؟

    سائل:

    سید اشرف علی

    باؤٹ گوٹھ ملیر کراچی

    بسم اللہ الرحمن الرحیم

    اللھم اجعل لی النور والھدایہ

    اگر میت مسجد میں ہوتومسجد میں نماز جنازہ ادا کرنا مکروہ ہے کیونکہ رسول اکرم صلی اللہ تعالی علیہ وسلم نے فرمایا

    من صلی علی جنازۃ فی المسجد فلا شیء لہ۔

    (مسند احمد ۵۶۸۹شرح معانی الاثار ۰۰۶۲۔مسندابن جعد ۱۵۷۲۔مصنف عبدالرزاق۹۷۵۶) ترجمہ:جس نے مسجد میں نماز جنازہ پڑھی اس کیلئے کو ئی اجر نہیں۔ اگر میت اور بعض لوگ مسجد سے باہر ہوں اور باقی مسجد میں ہوں تو یہ صورت جائز ہے اس میں کوئی حرج نہیں جیسا کہ عنایہ شرح ہدایہ میں ہے:

    وان کانت الجنازۃ والامام وبعض القوم خارج المسجد والباقی فیہ لم تکرہ بالاتفاق

    (عنایہ شر ح ھدایہ جزء ۳ /ص۱)

    ترجمہ:اگر جنازہ،امام اور بعض لوگ مسجد سے باہر ہوں اور باقی مسجد میں ہوں تو بالاتفاق یہ مکروہ نہیں۔

    اگرصرف جنازہ مسجد سے باہر ہواور امام اور قوم مسجد میں ہوں تو اس بارے میں علماء میں اختلاف ہے جیسا کہ عنایہ میں ہے 

    وان کان الجنازۃ وحدھا خارج المسجد ففیہ اختلاف المشائخ۔

    (عنایہ شر ح ھدایہ جزء ۳/۱)

    امام سرخسی رحمہ اللہ تعالی مبسوط میں ذکر فرماتے ہیں

    وعندنا اذا کان الجنازہ خارج المسجد لم یکرہ ان یصلی علیھا فی المسجد وانما الکراھۃ لادخال الجنازۃ لقولہ علیہ السلام ”جنبوا مساجدکم صبیانکم ومجانینکم“واذا کان الصبی ینحی عن المسجد فالمیت اولی۔

    (المبسوط للسرخسی۲/۳۲۱)

    ترجمہ:جب جنازہ مسجد سے باہر ہو تو ہمارے نزدیک اس پر مسجد میں نماز پڑھنا مکروہ نہیں کیونکہ کراہت صرف جنازہ کو مسجد میں داخل ہونے کی وجہ سے پیدا ہوئی ہے۔آپ صلی اللہ تعالی علیہ وسلم نے فرمایا: اپنی مساجد کو بچوں اور مجنوؤں سے پاک رکھو۔جب بچہ مسجدسے روکا جا تا ہے تو میت کو بدرجہ اولی روکا جائے گا۔

    رد المحتار میں ہے 

    وفی روایۃلایکرہ اذا کان ا لمیت خارج المسجد(قولہ بناء علی ان المسجد الخ)اما اذا عللنا بخوف تلویث المسجدفلا یکرہ اذا کان المیت خارج المسجد وحدہ او مع بعض القوم۔قال فی شرح المنیۃ:والیہ مال فی المحیط والمبسوط وعلیہ العمل وھو المختار۔قلت قد ذکرفی غایۃ البیان والعنایۃ لا کراھۃ فیھابالاتفاق۔

    (رد المحتار ۶/۱۴۳)

    ترجمہ:ایک روایت میں ہے اگر میت مسجد سے باہر ہوتو مکروہ نہیں۔جب ہم نے اس کی علت خوف تلویث مسجد قرار دیا تو اکیلی میت مسجد سے باہر ہو یا بعض قوم بھی باہر تو یہ مکروہ نہیں۔منیہ کی شرح میں فرمایا:محیط اور مبسوط میں اسی کی طرف رجوع فرمایا اور اسی پر عمل ہے اور یہی مختارہے۔ علامہ ابن عابدین شامی کہتے ہیں کہ غایۃ البیان اور عنایہ میں ذکر کیا گیا ہے کہ اس میں بالاتفاق کراہت نہیں۔

    پھر تتمہ میں فرمایا کہ بلاعذرمسجد میں نماز جنازہ پڑھنا مکروہ ہے لیکن عذر ہو تو جائز ہے۔ کیاجنازہ گاہوں کے نشانات مٹ جانے کی وجہ سے ہمارے بلاد کی مساجد میں نماز جنازہ پڑھنے کی عادت معروفہ عذر بن سکتی ہے؟ اسکے جواب میں فرمایا کہ ہاں یہ عذر ہے کیونکہ بعض جگہوں میں مسجد سے باہر سڑک پر رکھ کر نماز جنازہ پڑھا جاتا ہے تو نجاست کے عموم اور ناپاک جوتے نہ اتارنے کی وجہ سے بہت سے لوگوں کی نمازیں فاسد ہو جاتی ہیں۔ لہذا اس معاملہ کی تنگی کی وجہ سے کراہت تنزیہ اور خلاف اولی کا فتوی دیا جائے گا جیسے امام ابن ہمام رحمہ اللہ تعالی نے ذکر فرمایالیکن ہم نے جو ذکر کیا اس میں عذر ہے اس لئے اس میں اصلا کراہت بھی نہ ہوگی۔

    (رد المحتار۶/۲۴۳)

    آپ کے محلہ باؤٹ گوٹھ کی صورت حال بھی اسی طرح کی کہ گلیاں آلودہ اور نجاست سے معمور ہیں جیسا کہ بندہ ناچیز نے بھی مشاہدہ کیا۔لہذا اس عذر کی بناء پر مسجد میں نماز جنازہ ادا کرنا جائز ہوگا۔میت اور امام اور ایک صف مسجد سے باہر ہو باقی لوگ اگرچہ مسجد میں بھی ہوں تو کوئی حرج نہیں۔

    ھذا ما عندی والعلم عند اللہ

    واللہ تعالی اعلم بالصواب

    محمد شہزاد خان جامعہ ربانیہ غوثیہ

    ماڈل کالونی اصحابی ٹاؤن ملیر کراچی ۴۱۰۲۔۵۔۴۲

Ask a Question

Tanzeem Publications

  • رب پہ بھروسہ از مولانا فاروق احمد سومرو
  • شب وروز کی پکار از مولانا کریم داد قادری
  • برائیوں کی جڑ از مولانا احمد رضا
  • ظلم کی برائی از مولانا مشتاق احمد شمس القادری
  • اخلاص از مولان گلشیر احمد قادری
  • رضا بالقضاء از مولانا دانیال رضا
  • نیکی کی بہاریں از ابو اریب محمد چمن زمان نجم القادری
  • مہمان نوازی از علامہ عبد المصطفی شیخ زادہ
  • جمالِ شریعت سندھی ترجمہ بہارِ شریعت پہلا حصہ از مفتی جمیل احمد چنہ
  • شکرِ پروردگار از تنظیم الارشاد زیرِ طبع
  • فضائل رمضان از علامہ محمد صادق سومرو
  • عمامہ کے ماثور رنگ از ابو اریب محمد چمن زمان نجم القادری
  • الاصباح شرح صغری اوسط کبری از مفتی محمد شہزاد حافظ آبادی
  • ستائیس رجب کی عبادتیں ، عبادت یاگمراہی؟ از ابو اریب محمد چمن زمان نجم القادری