Question & Answer

  • چندہ اور زکوۃ کا حساب الگ الگ رکھا جائے

    الاستفتاء

    قابل صد احترام جناب بزرگوار

    مفتی ابراہیم صاحب دام ظلکم

    سوال: جناب کی خدمت عالیہ میں التماس یہ ہے کہ ایک جماعت برادری سطح پر فلاحی کام کر رہی ہے جس کا وہ ماہانہ چندہ وصول کر کے موقع بہ موقع افراد کی اعانت اور مدد کرتی ہے اب وہ اس امر کا ارادہ رکھتی ہے کہ زکوٰۃ، خیرات اور چرم قربانی لے کر ایک فنڈ جمع کریں جس سے مزید حق دار اور غریب، بیواؤں کی مدد کی جائے تو اس میں عالم ربانی کیا فرماتے ہیں۔ کیا دونوں فنڈوں کو جمع کر لیا جائے یا الگ الگ رکھ کر تقسیم کیا جائے؟ جواب سے آگاہی فرمائیں۔

    الجواب بعون الملک الوھاب

    مستحقین کی امداد کے سلسلے میں زکوٰۃ و چرم ہائے قربانی کو جمع کیا جا سکتا ہے مگر فلاحی کاموں کے لیے کیا جانے والا چندہ اور زکوٰۃ کا مصرف چونکہ ایک نہیں ہے اس لیے دونوں مدوں کا الگ الگ حساب رکھنا ہو گا اور زکوٰۃ کی رقم کی تقسیم ایک بڑی ذمہ داری کا کام ہے جس کا نبھانا ہر آدمی کے بس کی بات نہیں ہے۔ اگر کوئی تنظیم اس ذمہ کو نبھا سکے تو اس بڑے کام کا بیڑا اُٹھا لے ورنہ اپنے آپ کو آزمائش میں نہ ڈال۔ زکوٰۃ سے متعلق احتیاطیں اور شرطیں مفصل طریقہ سے بہارِ شریعت میں رقوم میں ان کا مطالعہ کیا جائے۔

    واللہ تعالیٰ اعلم بالصواب

    مفتی محمد ابراہیم القادری الرضوی غفرلہ

    خادم جامعہ غوثیہ رضویہ سکھر 6 اپریل 2006ء

Ask a Question

Tanzeem Publications

  • رب پہ بھروسہ از مولانا فاروق احمد سومرو
  • شب وروز کی پکار از مولانا کریم داد قادری
  • برائیوں کی جڑ از مولانا احمد رضا
  • ظلم کی برائی از مولانا مشتاق احمد شمس القادری
  • اخلاص از مولان گلشیر احمد قادری
  • رضا بالقضاء از مولانا دانیال رضا
  • نیکی کی بہاریں از ابو اریب محمد چمن زمان نجم القادری
  • مہمان نوازی از علامہ عبد المصطفی شیخ زادہ
  • جمالِ شریعت سندھی ترجمہ بہارِ شریعت پہلا حصہ از مفتی جمیل احمد چنہ
  • شکرِ پروردگار از تنظیم الارشاد زیرِ طبع
  • فضائل رمضان از علامہ محمد صادق سومرو
  • عمامہ کے ماثور رنگ از ابو اریب محمد چمن زمان نجم القادری
  • الاصباح شرح صغری اوسط کبری از مفتی محمد شہزاد حافظ آبادی
  • ستائیس رجب کی عبادتیں ، عبادت یاگمراہی؟ از ابو اریب محمد چمن زمان نجم القادری