Question & Answer

  • مقروض پر زکوۃ واجب نہیں

    الاستفتاء

    علماء کرام کیا فرماتے ہیں:

    میرے پاس اپنا ذاتی مکان رہائش کے لیے ہے۔ ایک عدد فلیٹ جس کا کرایہ 1400 روپے ماہوار ہے۔ 3 سال پہلے جب میں مقروض نہ تھا ایک عدد مکان مالیت اب تقریباً 3لاکھ ہے خرید کیا تھا۔ زیر تعمیر ہے، رقم نہ ہونے کی وجہ سے تعمیر مکمل نہ ہو سکی۔ نقد نہ سونا ہے نہ نقد رقم ہے۔ دکان میں مال اُدھار لے کر رکھا ہے جس سے بچوں کا گزارا کرتا ہوں اور کچھ قرض اُتارنے کی کوشش کر رہا ہوں۔ قرض تقریباً ایک لاکھ کے قریب ہے۔ اب زکوٰۃ دینے کا طریقہ کیا ہو گا؟ کس طرح ادا کروں؟ الجواب بعون الملک الوھاب

    جب آپ مقروض ہیں اور مالی استطاعت نہیں رکھتے تو آپ پر زکوٰۃ واجب نہیں۔ اللہ تعالیٰ کسی بندہ پر اس کی طاقت سے بڑھ کر بوجھ نہی ڈالتا۔

    مفتی محمد ابراہیم القادری الرضوی غفرلہ

    خادم جامعہ غوثیہ رضویہ سکھر 25 رمضان المبارک1424ہجری

Ask a Question

Tanzeem Publications

  • رب پہ بھروسہ از مولانا فاروق احمد سومرو
  • شب وروز کی پکار از مولانا کریم داد قادری
  • برائیوں کی جڑ از مولانا احمد رضا
  • ظلم کی برائی از مولانا مشتاق احمد شمس القادری
  • اخلاص از مولان گلشیر احمد قادری
  • رضا بالقضاء از مولانا دانیال رضا
  • نیکی کی بہاریں از ابو اریب محمد چمن زمان نجم القادری
  • مہمان نوازی از علامہ عبد المصطفی شیخ زادہ
  • جمالِ شریعت سندھی ترجمہ بہارِ شریعت پہلا حصہ از مفتی جمیل احمد چنہ
  • شکرِ پروردگار از تنظیم الارشاد زیرِ طبع
  • فضائل رمضان از علامہ محمد صادق سومرو
  • عمامہ کے ماثور رنگ از ابو اریب محمد چمن زمان نجم القادری
  • الاصباح شرح صغری اوسط کبری از مفتی محمد شہزاد حافظ آبادی
  • ستائیس رجب کی عبادتیں ، عبادت یاگمراہی؟ از ابو اریب محمد چمن زمان نجم القادری